فیس بک پیج سے منسلک ہوں

ملک بھر میں کریک ڈاون: تحریک لبیک کی قیادت اوربڑی تعداد میں کارکن گرفتار

اسلام آباد پالیٹکس رپورٹ / معظم رضا تبسم :  ملک بھر میں تحریک لبیک پاکستان (ٹی ایل پی) کے خلاف کریک ڈاون آپریشن میں سربراہ علامہ خادم حسین رضوی،ڈاکٹر اشرف جلالی  ، پیر افضل قادری اور دیگر راہنماؤں  اوردرجنوں کارکنوں کو بھی حراست میں لے لیا گیا ہے۔
خادم رضوی نے 25 نومبر کو یوم شہدا تحریک منانے کا اعلان کر رکھا ہے اور رہنماؤں و کارکنوں کو فیض آباد پہنچنے کا حکم دے رکھا ہے۔
پولیس ذرائع کے مطابق لاہور میں تحریک لبیک کے کارکنوں کے خلاف ملتان روڈ پر آپریشن کیا گیا اور خادم رضوی سمیت 50 کارکنوں کو گرفتار کرلیا گیا۔تحریک لیبک کی قیادت کی گرفتاری کے بعد تحریک نے احتجاج کی کال دیدی ہے مگر ملک بھر میں پولیس احتجاج کے لئے نکلنے والے کارکنوں کو بھی گرفتارکررہی ہے۔ تحریک لبیک کیخلاف کریک ڈاون کا فیصلہ جمعہ کو کیا گیا تھا جس کے بعد تمام صوبوں میں پولیس کا ہائی الرٹ کردیا گیا تھا۔
تحریک لبیک کے متوقع احتجاج کے پیش نظر اسلام آباد راولپنڈی کے سنگم پر فیض آباد انٹر چینج پر بھاری پولیس نفری تعنیات کر دی گئی ہے اور ہر صورت ٹریفک کی روانی کو برقرار رکھنے کے احکامات انتظامیہ اور پولیس کو جاری کئے گئے ہیں۔دارالحکومت میں فیض آباد کے مقام پر بھی پولیس کے تقریباً 100 اہلکاروں کو تعینات کردیا گیا ہے۔
راولپنڈی سے ٹی ایل پی کے 59 رہنماؤں اور کارکنان کو حراست میں لیا گیا جبکہ دیگر کارکنان کی گرفتاری کے لیے چھاپے مارے جارہے ہیں۔ راولپنڈی کی ضلعی انتظامیہ نے تحریک لبیک کے ڈویژنل صدر سید عنایت الحق شاہ کو نظر بند کرنے کے احکامات جاری کیے ہیں۔ نظر بندی کے نوٹی فکیشن کے مطابق سید عنایت الحق شاہ کو 15 روز کے لیے جیل میں نظر بند کیا جائے گا۔
واضح رہے کہ خادم حسین رضوی کی گرفتاری کی اطلاعات، سپریم کورٹ کی جانب سے گزشتہ ماہ مسیحی خاتون آسیہ بی بی کو توہین مذہب کے الزام سے بری کرنے کے فیصلے کے خلاف تحریک لبیک کے ملک بھر میں تین روز تک جاری احتجاج کے چند ہفتے بعد سامنے آئی ہیں۔
مذہبی و سیاسی جماعت نے وفاقی اور پنجاب حکومت سے معاہدے کے بعد یہ احتجاجی دھرنا ختم کیا تھا، جس کے تحت حکومت نے آسیہ بی بی کا نام ایگزٹ کنٹرول لسٹ (ای سی ایل) میں ڈالنے کے لیے قانونی کارروائی کی حامی بھری تھی۔
مولانا خادم رضوی نے گرفتاری سے قبل اپنے ویڈیو پیغام میں حکومت سے معاہدہ پر عملدرآمد نہ کرنے کا شکوہ کیا تھا اور مطالبہ کیا تھا کہ معاہدہ پر عملدرآمد کیا جائے- کراچی میں نمائش چورنگی پرتحریک لبیک کے کارکن احتجاج کے لئے جمع ہوگئے، پولیس نے سڑک ٹریفک کے لیے بند کردی۔

صورتحال مکمل کنڑول میں ہے ، عوام پرامن رہیں: فواد چوہدری
وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری نے کہا ہے کہ صورتحال مکمل کنٹرول میں ہے،عوام پر امن رہیں ،حکام سےتعاون کریں۔ فواد چوہدری نے کہا کہ موجودہ کارروائی کا آسیہ بی بی کے مقدمے سے کوئی تعلق نہیں،فوادچودھری نے قرار دیا کہ خادم حسین رضوی کو حفاظتی تحویل میں لے کر مہمان خانے منتقل کیا گیا گیا ہے کارروائی کی ضرورت25نومبرکی احتجاجی کال واپس نہ لینےکیوجہ سےپیش آئی،فواد چوہدری نے کہا کہ تحریک لبیک مذہب کی آڑ لے کر سیاست کررہی ہے،عوام کی جان و مال اور املاک کی حفاظت حکومت کا اولین فرض ہے۔

مولانا خادم رضوی کی گرفتاری کی ویڈیو دیکھنے کے لئے نیچے دی تصویر پر کلک کریں

اس خبر بارے مزید تفصیلات آرہی ہیں۔