فیس بک پیج سے منسلک ہوں

بظاہر انتخابات کے التوا کی کوئی وجہ نظر نہیں آتی۔ وفاقی وزیراطلاعات

اسلام آباد پالیٹکس رپورٹ/معظم رضا تبسم : نگران وفاقی وزیراطلاعات، نشریات، قانون و انصاف بیرسٹر سید علی ظفر نے کہا ہے کہ انتخابات میں کسی قسم کے التوا کا کوئی امکان نہیں اور انشااللہ ملک میں انتخابات بروقت ہوں گے اور 25 جولائی ہی کو ہوں گے۔

بدھ کو ایک نجی ٹی وی چینل کے پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ گزشتہ کچھ روز سے ملک میں بھرپور انتخابی گہما گہمی ہے اور ہر سیاسی جماعت ملک بھر میں اپنا اپنا موقف بھی پیش کر رہی ہے اور انتخابی مہم بھی چلا رہی ہے جس سے عام انتخابات کے التوا کے جو خدشات اور افواہیں تھیں وہ کم ہو گئی ہیں ، بظاہر ایسی افواہوں کی کوئی وجہ نظر نہیں آتی۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ نگراں حکومت کی پوری ذمہ داری ہوتی ہے کہ بروقت انتخابات کے انعقاد کے ساتھ ساتھ دیگر امور کو بھی حل کرے اور فیصلے بھی کرے لیکن یہ بات بھی درست ہے کہ جو گزشتہ 40,50 سال سے ہوا ہے اس میں دو ماہ کے اندر تبدیلیاں نہیں لائی جا سکتیں، اگر گزشتہ 40,50 سال سے ملک میں ڈیمز نہیں بنائے گئے تو اس کا ذمہ دار آپ کسی صورت نگران حکومت کو تو نہیں بنا سکتے۔ ایک اور سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ میں الزامات کی گیم نہیں جانا چاہتا بلاشبہ ہمارے نگران دور حکومت میں پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ ہوا جو انتہائی ناگزیر تھا جس کا ذمہ دار نگران حکومت کو نہیں ٹھہرایا جا سکتا۔ ایک اور سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ پولنگ کی آرگنائزیشن سمیت ووٹنگ سسٹم کے تمام انتظامات تو الیکشن کمیشن آف پاکستان کرتی ہے، اس ضمن میں الیکشن کمیشن جو طلب کرے گا نگران حکومت اپنی ذمہ داری ضرور پوری کرے گی۔ انہوں نے کہا کہ الیکشن کمیشنر آف پاکستان سے میری ہونے والی ملاقات میں انہوں نے مجھے تفصیلی بریفنگ کے دوران اقدامات کے حوالے سے بتایا اس سے میں بہت مطمئن ہوں۔ انہوں نے کہا کہ نگراں حکومت کی نہ تو کوئی مداخلت ہے اور نہ ہی ہونی بھی چاہیئے کیونکہ انویسٹی گیشن ایجنسیوں نے اپنا کام کرنا ہے اور عدالتوں نے اپنا کام کرنا ہے لیکن اگر اس کو کوئی انتخابات سے قبل دھاندلی کہتا ہے تو پھر یہ ان کی اپنی مرضی ہے لیکن میں تو اس معاملے میں بڑا پرعزم ہوں کہ جب تک اداروں کو آزاد اور طاقتور نہیں کریں گے تب تک آگے نہیں بڑھیں گے۔