فیس بک پیج سے منسلک ہوں

سی یپک زرداری دور میں شروع ہوا,قائمقام چینی سفیر لی ژیان زو

اسلام آباد پالیٹکس رپورٹ/معظم رضا تبسم: چین کے قائمقام سفیر مسٹر لی ژیان زو نے کہاہے کہ سی پیک کے منصوبے 2030میں مکمل ہوں گے،سی یپک کے تحت9 اکنامک زونز اگلے مرحلے میں بنائے جائیں گے، سی پیک کا منصوبہ پاکستان پیپلز پارٹی کے دور میں مئی 2013میں شروع ہوا ۔پیپلز پارٹی کا یہ کہنا درست ہے کہ یہ زرداری دور میں شروع ہوا ہے۔2015ء میں سی پیک کے منصوبے میں تیزی آئی ہے۔سی پیک سے پاکستانی عوام کو فائدہ ہوگا۔
یہ ایک سڑک کا نام نہیں ہے سی پیک پورے پاکستان کو کور کرے گا اور اس سے پورے پاکستان میں ترقی ہوگی۔سی پیک کے منصوبے 2030ء تک مکمل ہوں گے سی پیک کا مقصد توانائی کے منصوبے لگانا ہے تاکہ پاکستان کی بجلی کی ضرورت پوری ہو، صوبوں اور وفاقی حکومت کا ٹیکس بڑھانا اور نئے روزگار پیدا کرنا ہے۔انہوں نے کہاکہ ملتان تا سکھر موٹر وے پر 24000 پاکستانی ملازمین کام کررہے ہیں حویلیاں تا تھاکوٹ 6400،پورٹ قاسم پر3000،قائد اعظم سولر پلانٹ پر 1500پاکستانی ملازمین کام کررہے ہیں۔ بات غلط ہے کہ سی پیک پر صرف چینی ملازمین کام کررہے ہیں ا ور وہ زیادہ تر قیدی ہیں۔انہوں نے کہا کہ اگلے پانچ سال میں سی پیک کے تحت انڈسٹریل پارک بنائے جائیں گے۔میڈیا میں کہاجارہاہے کہ کوئلے کے پلانٹ ماحول دوست نہیں۔یہ سراسر غلط ہے۔چین میں بھی 1000 سے زائد کوئلے کے پلانٹ لگے ہیں صرف 2 کوئلے کے پلانٹس کو بند کیا گیا ہے۔پوری دنیا میں 1/3 بجلی کوئلے سے بنائی جا رہی ہے۔پاکستان میں جدید ترین کوئلے کے پلانٹس لگائے گئے ہیں جو آلودگی کم پیدا کرتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ پاکستان میں غلط فہمیاں پیدا کی جارہی ہیں کہ چین سی پیک منصوبوںکے لیے بہت زیادہ شرح سود پر قرض دے رہا ہے چین منصوبوں کے لیے پانچ سے چھ فیصد سود پر قرض دے رہا ہے جو کہ بین الاقوامی معیار کے مطابق ہے۔بد قسمتی سے پرنٹ میڈیا میں بھی اس حوالے سے غلط پروپیگنڈا کیا جا رہا ہے اور سی پیک کو بوجھ کے طور پر پیش کیا گیا۔توانائی کے منصوبوں کے لیے 13 ملین ڈالر دیئے گئے جو کل سی پیک کے بجٹ کے 68 فیصد ہے۔چین اس کے علاوہ پاکستان کی امداد کر رہا ہے جس کے تحت سکول،فنی تربیت کے مراکز اور ہسپتال بنائے جا رہے ہیں۔اس کے علاوہ بلا سود قرض بھی شامل ہیں۔اس کے ساتھ 6 ارب ڈالر کا قرض دیا گیا ہے جو پاکستان نے 2024ء میں 527 ملین ڈالر سود سمیت واپس کرنا ہے جبکہ کل رقم 7.4 ارب ڈالر بنتی ہے۔انہوں نے کہا کہ حکومت پاکستان اور حکومت چین کے درمیان خسارا 10 فیصدہے۔انہوں نے کہا کہ سی پیک کو ایسٹ انڈیا کمپنی سے تشبیح دینا غلط ہے۔

 

Lijian Zhao 赵立坚

✔@zlj517

Chinese envoy claims CPEC was initiated by China when Zardari was in power in 2013. CPEC is an across-the-board national consensus in Pakistan. CPEC is most successful project under the BRI. https://www.pakistantoday.com.pk/2018/06/26/chinese-envoy-claims-idea-of-cpec-initiated-by-zardari-in-2013-report/ …

Chinese envoy claims idea of CPEC initiated by Zardari in 2013: report

Deputy Chief Mission of Chinese Embassy, Lijian Zhao on Monday said that the success of the all China-Pakistan Economic Corridor (CPEC) projects are based on transparency to minimise corruption, medi

pakistantoday.com.pk

پیپلز پارٹی کی رہنما بختاور بھٹو زرداری نے چین کے قائمقام سفیر لی ژیان زو کے بیان اور ٹویٹ پر اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ ہم سب نے ۲۰۱۳ میں سی پیک کا آغاز ہوتے دیکھا ہے، ہم سب اس کے شاہد ہیں، ہم سب سے مراد پاکستانکے عوام، جس میں تمام سیاسی جماعتیں، اور میڈیا ہاوُسز شامل ہیں، مگر لگتا ہے سب دانستہ طور پر یہ کریڈٹ چھیننا چاہ رہے ہیں۔ انہوں نے اگلی باری پھر زرداری کا ہیش ٹیگ استعمال کیا ہے۔

Bakhtawar B-Zardari

✔@BakhtawarBZ

We all witnessed CPEC in 2013, by we I mean the people of Pakistan including opposition parties & media houses but all decided to purposefully take credit away. From 18th Amendment to currency swap with multiple nations to BISP & more ???? https://twitter.com/zlj517/status/1011506393059389440 …