پاناما کیس :جے آئی ٹی کی وزیراعظم کے داماد سے چھ گھنٹے تفتیش

اسلام آباد پالیٹکس رپورٹ/ معظم رضا تبسم : وزیراعظم کے داماد کیپٹن ریٹائرڈ صفدر عباسی سے پاناما جے آئی ٹی ٹیم کی چھ گھنٹے تفتیش  ، دوران تفتیش دستاویزات بھی منگوائیں، طویل تفتیش کے باعث لندن روانگی کےلئے فلائٹ کا ٹائم تبدیل کرنا پڑا ۔ کیپٹن ریٹائرڈ صفدر نے تفتیش کے بعد میڈیا سے گفتگو میں  قرار دیا کہ پاناما کیس نوازشریف نہیں بلکہ نظریہ پاکستان کے خلاف ہے۔

وزیر اعظم نواز شریف کے داماد کیپٹن ریٹائرڈ صفدر سے ہفتہ کے روز جوڈیشل اکیڈمی میں جے آئی ٹی کی چھ  گھنٹے تفتیش کی۔ تفتیش کے دوران کیپٹن صفدر نے بنک اکاؤنٹس کی دستاویزات بھی منگوائیں۔ یپٹن ریٹائرڈ صفدر کو تین بجے لندن روانہ ہونے کے لئے نکلنا تھا مگر جے آئی ٹی تفتیش طویل ہونے کی وجہ سے فلائٹ ٹائم رات 8 بجے تبدیل کروایا گیا۔ واضح رہے کہ کیپٹن ریٹائرڈ صفدر کو جے آئی ٹی نے آج گیارہ بجے طلب کیا تھا ، کیپٹن ریٹائرڈ صفدر پندرہ منٹ پہلے جوڈیشل اکیڈمی پہنچے گئے تھے ۔

کیپٹن ریٹائرڈ صفدر عباسی نے پاناما جے آئی ٹی کے سامنے پیشی کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ہم 73 کے آئین کی پاسداری کے لئے یہاں کھڑے ہیں، پاناما کیس پاکستان کو ایٹمی طاقت بنانے والے نواز شریف اور نظریہ پاکستان کے خلاف ہے، سرے محل بنانے والوں سے کوئی نہیں پوچھ رہا اور نہ ہی کارگل کے مجرم کو کوئی پکڑ رہا ہے۔  ان کا کہنا تھا کہ 2018 کے الیکشن میں عوام نواز شریف کو ایک بار پھر منتخب کر کے محفوظ پاکستان کے سفر کو یقینی بنائیں گے، اگرعمران خان نے اپنے آپ کو آئین اور نظریہ پاکستان کیخلاف کی جانے والی سازشوں سے دورنہیں کیا تو تاریخ انہیں کبھی معاف نہیں کرے گی۔