پی ٹی آئی اور حکومت پس پردہ رابطوں میں اسلام آباد لاک ڈاؤن التواء طے ؟

نیوز گیٹ سکینڈل میں وفاقی وزیر اطلاعات کی معزولی ،حکومت کے از خود اسلام آباد لاک ڈاؤن اور قبل از وقت انتخابات کے لئے مہم جوئی کی ہیجان انگیز بازگشت میں سپریم کورٹ یکم نومبر کو پاناما لیکس اور وزیراعظم کی نااہلی کے حوالے سے درخواستوں کی سماعت کریگی۔ پی ٹی آئی اور حامی اپوزیشن جماعتیں پاناما لیکس کی تحقیقات مکمل ہونے تک وزیراعظم نواز شریف کو اپنے عہدے سے الگ ہونے کا مطالبہ کررہی ہیں جبکہ وزیراعظم اور حکومتی وزرا ء کی اپوزیشن کا مطالبہ کسی صورت تسلیم نہ کرنے کی تکرارجاری ہے تو دوسری طرف عمران خان کو جنونی کارکن رکھنے والی مذہبی سیاسی جماعتوں کی مزید حمایت ملنے کا سلسلہ جاری ہے۔
اسلا م آباد ہائیکورٹ نے عمران خان کے دو نومبر کو اعلان کردہ احتجاج کے لئے وفاقی دارلحکومت میں مختص ڈیموکریسی پارک میں احتجاج اور دھرنا کرنے کی ہدایت دیدی۔ دوسری طرف حکومت نے پی ٹی آئی کو اسلا م آباد لاک ڈاؤن سے روکنے کے نام پر وفاقی دارلحکومت کو پنجاب اور خیبر پختونخواہ سے آنے والے راستوں جی ٹی روڈ اور موٹر وے بند کرکے عملی طور پر خود لاک ڈاؤن کردیا ہے۔
حکومت کی جانب سے جہاں پی ٹی آئی کے رہنماووں اور کارکنوں کی گرفتاریوں اور نظر بندیوں کا سلسلہ شروع ہے وہیں ذرائع کے حوالے سے اطلاعات ہیں کہ حکومت نے پس پردہ پی ٹی آئی کی پاناما لیکس کے حوالے سے پارلیمنٹ میں زیر غور بل کی منظوری کا عمل شروع کرنے کی آفر قبول کرنے کا پس پردہ عندیہ دے دیدیا ہے ۔
یقیناًحکومت کی خواہش ہوگی کہ پاناما لیکس پر پارلیمنٹ میں قانون سازی کے لئے عمرا ن خان کو اپنا اسلام آباد لاک ڈاؤن منصوبہ زیر التواء رکھنے اور ڈیموکریسی پارک یعنی فیض آباد سے زیرو پوائنٹ تک احتجاجی دھرنا محدود رکھنے سے مشروط کی ہوگی۔ یہی وجہ ہے کہ عمران خان کی طرف سے اسلام آباد لاک ڈاؤن کی تاریخ آگے بڑھانے کا اشارہ دیا جا رہا ہے ۔ واضح رہے کہ پی ٹی آئی نے اسلام آباد لاک ڈاؤن منصوبہ التواء کرنے کو پارلیمنٹ میں پاناما لیکس پر اپوزیشن بل کی منظوری کا عمل شروع کرنے سے مشروط آفر دی تھی جس کی پیپلزپارٹی نے بھی حمایت کی تھی اور پیپلزپارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے دو روز قبل پارٹی اجلاس میں پارٹی کے اراکین سینٹ و قومی اسمبلی کو پارلیمنٹ کے دونوں ایوانوں کا اجلاس طلب کرنے کے لئے ریکوزیشن جمع کرانے کی ہدایت دی تھی۔ تاہم حکومت وزیراعظم کو پاناما لیکس کی تحقیقات کے لئے عہدہ چھوڑنے کا مطالبہ قبول کرنے کو کسی طور تیار نہیں۔
شہر اقتدار میں حکومتی زعما ء ڈان نیوز گیٹ سکینڈل کی شفاف تحقیقات کے نتیجہ میں پرویز رشید کی وزیر اطلاعات کے عہدہ پر بحالی کے عندیہ دے رہے ہیں۔گو کہ شہر اقتدار میں کہ ڈا ن نیوز گیٹ سکینڈل میں وفاقی وزیر اطلاعات کو تحقیقات سے قبل معزول کرکے حکومت نے عملی طور پرخود ایک روایت سیٹ کردی ہے اور  پی ٹی آئی اور حامی اپوزیشن جماعتیں پانامالیکس کیس میں سپریم کورٹ کی جانب سے وزیراعظم کو تحقیقات تک عہدے سے الگ ہونے کا حکم آنے امید لگائے بیٹھے ہیں۔ بعین فوج کی طرف سے ڈان نیوز گیٹ کے معاملہ پر حکومت کیخلاف کسی ایکشن کے حوالے سے امیدیں رکھی جا رہی ہیں -

* پی ٹی آئی لاک ڈاؤن کی پس پردہ  سیاست سے تجزیہ کی متعلقہ ویڈیو کے لئے نیچے دئیے لنک پر کلک کریں

پی ٹی آئی لاک ڈاؤن کی پس پردہ سیاست